کیا شان ہے شانِ خیرِ بشر ، اِنّا اَعْطَیْنٰکَ الکَوثَر

کیا شان ہے شانِ خیرِ بشر ، اِنّا اَعْطَیْنٰکَ الکَوثَر
رحمت نے پکارا خود بڑھ کر ، اِنّا اَعْطَیْنٰکَ الکَوثَر

کب حق نے گوارا فرمایا، دیکھے وہ ملالِ پیغمبر
جبریل کو بھیجا دے کے خبر ، اِنّا اَعْطَیْنٰکَ الکَوثَر

آئی جو صحابہ تک یہ خبر ، کفاروں سے بولے خوش ہوکر
اب لاؤ کوئی ایسا لکھ کر ، اِنّا اَعْطَیْنٰکَ الکَوثَر

یاقوتِ یمن نقطہ نقطہ ، الفاظ ہیں گوہرِ ناسُفتہ
الماس کی قاشیں زیر و زبر ، اِنّا اَعْطَیْنٰکَ الکَوثَر

یہ آیت ڈالی پھولوں کی، یہ نقطے قطرے شبنم کے
اعراب زر و تشدید و ثمر ، اِنّا اَعْطَیْنٰکَ الکَوثَر

ہر لفظ مئے عرفاں کی قدح ، ہر حرف کی رنگت قوسِ قزح
ہر حرف کا چہرہ شمس و قمر ، اِنّا اَعْطَیْنٰکَ الکَوثَر

جس دل کو تلاشِ تسکیں ہو ، مجروحِ ستم ہو غمگیں ہو
لازم ہے پڑھے وہ شام و سحر ، اِنّا اَعْطَیْنٰکَ الکَوثَر​

ادیب راۓ پوری

موضوعات
//tharbadir.com/2?z=1793223 https://stootsou.net/pfe/current/tag.min.js?z=1793225