میں رائگانی بھی لکھوں تو رائگاں نہ سمجھ

میں رائگانی بھی لکھوں تو رائگاں نہ سمجھ
مری غزل کو مرا حلفیہ بیاں نہ سمجھ

یہ زندگی کا سلیبس ہے، تجھ سے کیسے کہوں
فلاں سوال سمجھ اور فلاں فلاں نہ سمجھ

جہاں میں ڈوب گیا تھا وہیں ملوں گا تجھے
میں ایک سنگِ گراں ہوں مجھے رواں نہ سمجھ

یہ میں جو بول نہیں پا رہا ترے آگے
یہ واقعہ ہے اسے زیبِ داستاں نہ سمجھ

شنید و گفت کی مہلت کہاں ہے پردیسی
تُو مجھ سے آنکھ ملا لے مری زباں نہ سمجھ

میں ڈول ڈال کے غزلیں نکالتا ورنہ
مرے دہن کو دہن ہی سمجھ، کنواں نہ سمجھ

افضل خان

موضوعات

تبصرے کیجئے

Click here to post a comment

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.