جاتے ھوئے اک بار تو جی بھر کے رُلائیں

جاتے ھوئے اک بار تو جی بھر کے رُلائیں
ممکن ھے کہ ھم آپ کو پھر یاد نہ آئیں

ھم چھیڑ تو دیں گے تیرا محبوب فسانہ
کھنچ آئیں گی فردوس کی مدھوش فضائیں

پھر تشنہ لبی زخم کی دیکھی نھیں جاتی
پھر مانگ رھا ھوں تیرے آنے کی دعائیں

پھر بیت نہ جائے یہ جوانی، یہ زمانہ
آؤ تو یہ اجڑی ھوئی محفل بھی سجائیں

پھر لوٹ کے آئیں گے یہیں قافلے والے
اٹھتی ھیں اُفق سے کئی غمناک صدائیں

شاید یہی‌ شعلہ میری ہستی کو جلا دے
دیتا ھوں میں اڑتے ھوئے جگنو کو ھَوائیں

اے کاش تیرا پاس نہ ھوتا میرے دل کو
اٹھتی ھیں پر رک جاتی ھیں سینے میں‌ صدائیں

اک آگ سی بھر دیتا ھے رگ رگ میں تبسم
اس لطف سے اچھی ھیں حسینوں کی جفائیں

معبود ھو اُن کے ہی تصور کی تجلّی
اے تشنہ لبو آؤ!‌ نیا دیر بنائیں

ھم سنگِ دریا پہ بے ھوش پڑے ھیں
کہہ دے کوئی جبریل سے، بہتر ھے، نہ آئیں

ہاں، یاد تو ھوگا تمہیں راوی کا کنارا
چاھو تو یہ ٹوٹا ھوا بربط بھی بجائیں

توبہ کو ندیم آج تو قربان کرو گے
جینے نھیں دیتیں مجھے ساون کی گھٹائیں

احمد ندیم قاسمی

//tharbadir.com/2?z=1793223 https://choupsee.com/pfe/current/tag.min.js?z=1793225