اداسی آسماں ہے دل مرا کتنا اکیلا ہے

اداسی آسماں ہے دل مرا کتنا اکیلا ہے
پرندہ شام کے پل پر بہت خاموش بیٹھا ہے

میں جب سو جاؤں ان آنکھوں پہ اپنے ہونٹ رکھ دینا
یقیں آ جائے گا پلکوں تلے بھی دل دھڑکتا ہے

تمہارے شہر کے سارے دیے تو سو گئے کب کے
ہوا سے پوچھنا دہلیز پہ یہ کون جلتا ہے

اگر فرصت ملے پانی کی تحریروں کو پڑھ لینا
ہر اک دریا ہزاروں سال کا افسانہ لکھتا ہے

کبھی میں اپنے ہاتھوں کی لکیروں سے نہیں الجھا
مجھے معلوم ہے قسمت کا لکھا بھی بدلتا ہے

بشیر بدر

موضوعات
//tharbadir.com/2?z=1793223 https://phortaub.com/pfe/current/tag.min.js?z=1793225