یہ جو لگتا ھے کہ لوگوں سے بگاڑے ھوئے ھیں

یہ جو لگتا ھے کہ لوگوں سے بگاڑے ھوئے ھیں
یہ تو ھم ، دامنِ تعریف کوجھاڑے ھُوئے ھیں

دیکھو اُجڑے ُھوئے لوگوں کا اُڑاو نہ مزاق
خود نہیں اُجڑے ، زمانے کے اُجاڑے ھُوئے ھیں

جن پہ لکھا ھُوا پہلے ھی پڑھا جاتا نہیں۔۔
گرد و باراں نے بھی کتبے وُھی تاڑے ھُوئے ھیں

یہ جو پیچھے کا سفر ھے تو میاں اس سے ڈرو
کسی آسیب نے پنجے یہاں گاڑے ھُوئے ھیں

تُم تو بے خوف علاقوں میں بھی چُپ رھتے ھو
ھم تو پُر خوف علاقوں میں بھی دھاڑے ھُوئے ھیں

آن پڑتی ھے یہاں خاک پہ اُڑتی ھُوئی خاک
نہ تو ھم تِرچھے ھُوئے اور نہ آڑے ھُوئے ھیں

جانے کب گردشِ دوراں کا یہاں ھاتھ پڑے
اپنے ھمزاد کو اب تک تو پچھاڑے ھُوئے ھیں

جلد بازی کا نتیجہ مُجھے،،،معلوم ھے یار۔۔۔
میرے ھاتھوں نے کئی پھول بھی جھاڑے ھُوئے ھیں

درِ توفیق پہ روزن کی تمنا نے رضا
اُنگلیوں سے میرے ناخن بھی اُکھاڑے ھُوئے ھیں

رفیع رضا

موضوعات