نہ رہی وہ بزمِ عشرت،نہ وہ عیشِِ جاودانہ

نہ رہی وہ بزمِ عشرت،نہ وہ عیشِِ جاودانہ
تیری اک نظر نے لوٹا__میری عمر کا خزانہ

نہ کہیں کا تو نے چھوڑا مجھے گردش_زمانہ
نہِیں ڈھونڈنے سے ملتا کہیں اب کوئی ٹھکانہ

یہی عین_بندگی ہے_____یہی رمز_عارفانہ
تیرے آستاں پہ جانا، تیرے در پہ سر جھکانا

میرے بدنصیب دل کو نہ ملا کوئی ٹھکانہ
نہ حریم_لالہ و گل، نہ قفس نہ آشیانہ

نہیں مجھ کو اِس کی پرواہ جو برا کہے زمانہ
میری عین بندگی ھے تیرے در پہ سر جھکانہ

تیرے سنگِ آستاں پہ یہ ملی ھے سر بلندی
میرا تاجِ سروری ھے______تیری خاکِ آستانہ

یہ وفاوں کا صلہ ہے،________یہ کرم کی انتہا ہے
مجھے اس نے اپنا سمجھا مجھے اس نے اپنا جانا

مجھے یاد آرھا ہے________وہ نظر نواز منظر
وہ میرا لپٹ کے رونا___وہ کسی کا مسکرانہ

نہیں ان کی ذات سے کچھ مجھے اے نصیر نسبت
میں گلِ خزاں رسیدہ___________وہ بہارِ جاودانہ۔۔۔۔

تبصرے کیجئے

Click here to post a comment

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.